Home / علاقائی خبریں / 30ہزار بچے نمونیا سے لقمہ اجل بن جاتے ہیں۔ حکیم سید عمران

30ہزار بچے نمونیا سے لقمہ اجل بن جاتے ہیں۔ حکیم سید عمران

دیپال پور (نمائندہ کماس)نمونیا پھیپھڑوں میں ہونے والی انفیکشن ہے جس کی زیادہ تر وجہ بیکٹیریا وائرس یا فنگس ہوتے ہیں۔ نمونیا کے شکار تقریباَ 45فیصد مریض بچوں میں بیکٹیریاوائرس دونوں انفیکشن اکھٹی پائی گئی ہیں۔ پاکستان میں ہر سال تقریباُُ 30ہزار بچے نمونیا سے وفات پا جاتے ہیں۔ سردیوں کے موسم میں STREPنمونیا کا حملہ بڑھ جاتا ہے۔ اس کی علامات میں کھانسی، تھکن، بخار، سانس میں دشواری بلغم اور سینے میں درد شامل ہے۔اِ ن خیالات کا اظہارپاکستان طبی کانفرنس کے زیر اہتمام منعقدہ سیمینار “نمونیا اور حفاظتی تدابیر” کے موضوع پر خطاب کرتے ہوئے پروفیسرحکیم محمداحمدسلیمی ،پروفیسرحکیم سید عمران فیاض ،حکیم محمد افضل میو، حکیم حافظ عبدالرزاق کھوکھر ،حکیم ارشد اقبال ،حکیم بابا عبدالستار،حکیم احمد حسن نوری ، حکیم امجد وحید بھٹی، حکیم عطاء الرحمان صدیقی،حکیم طاہر نوید جنجوعہ ،حکیم طاہر خان،حکیم محمد ابو بکر،حکیم عبدالحمید دانش، حکیم حاجی عبدالکریم بھٹی، حکیم محمد احمد، حکیم محمد اسحاق، حکیم سید اعجاز الحق گیلانی اور ڈاکٹر سکندر حیات زاہد نے کیا۔ اُنھوں نے کہا کہ نمونیا سے بچاؤ کی بہترین طریقہ خوراک میں احتیاط اور ویکسین ہے۔ جسم میں پانی کی کمی کو دور کرنے کیلئے نمکول والا پانی، گلوکوز، یخنی سوپ چائے کا زیادہ سے زیادہ استعمال کیا جائے۔ عموماََ اٹیک ایک پھیپھڑے پر ہوتا ہے۔ اگر ایک ہی وقت میں دونوں پھیپھڑوں پر ہو جائے تو وہ ڈبل نمونیا کہلاتا ہے۔طبِ یونانی میں اس کا علاج موجود ہے۔ نمونیا کا شکار مریض سے نمو نیا کے جراثیم صحت مند انسان کو منتقل ہو سکتے ہیں۔ یہ مریض کے کھانسنے اور چھینکنے سے ہوا کے ذریعے داخل ہو جاتے ہیں اور سانس کے ذریعے پھیپھڑوں میں داخل ہو جاتے ہیں۔

About رخسار

Check Also

گجر پورہ اور نشتر کا لو نی میں ٹریفک حا دثات ٗ2 نو جوان جاں بحق

لاہور(نامہ نگار)گجر پورہ اور نشتر کا لو نی میں ٹریفک حا دثات میں 2 نو …

جواب دیں